چوہدری شوگر ملز کیس: نواز شریف، مریم نواز کو حاضری سے استثنیٰ

لاہور کی احتساب عدالت نے مسلم لیگ (ن) کے رہنما مریم نواز اور ان کے والد نواز شریف کو چوہدری شوگر ملز (سی ایس ایم) مقدمے میں حاضری سے استثنی منظور کردی۔

سابق وزیراعظم نواز شریف کو 4 ہفتوں جبکہ ان کی صاحبزادی کو ریفرنس فائل ہوجانے تک استثنیٰ دیا گیا۔

دوران سماعت احتساب عدالت کے جج چوہدری عامر محمد خان نے استفسار کیا کہ سی ایس ایم کیس میں ریفرنس کی کیا حیثیت ہے؟

جس کے جواب میں قومی احتساب بیورو (نیب) کے پراسیکیوٹر حافظ اسداللہ اعوان نے کہا کہ تفتیش جاری ہے اور جیسے ہی یہ کام مکمل ہوگا، ریفرنس دائر کیا جائے گا۔

عدالت میں پیش ہونے والی مسلم لیگ (ن) کی نائب صدر مریم نواز نے ریفرنس دائر ہونے تک عدالت میں پیشی سے استثنیٰ دینے کے لیے درخواست جمع کرائی تھی۔

کارروائی میں نواز شریف کی حاضری سے استثنیٰ حاصل کرنے کے لیے ایک اور درخواست بھی پیش کی گئی۔

درخواست کی مخالفت کرتے ہوئے نیب پراسیکیوٹر نے کہا کہ مریم نواز کو قانون کے مطابق عدالت میں پیش ہونا چاہیے۔

انہوں نے مزید کہا کہ بیورو، درخواست پر تحریری جواب پیش کرے گا۔

مریم نواز کے وکیل ایڈووکیٹ امجد پرویز نے کہا کہ نیب نے ضمنی ریفرنس بھی داخل نہیں کیا اور پوچھا کیا کہ ملزمان کو طلب کرنے کی ضرورت کیوں ہے؟

انہوں نے کہا کہ فوجداری قانون کے مطابق جب تک چالان موصول نہیں ہوتا تب تک مشتبہ افراد کو عدالت میں پیش ہونے کی ضرورت نہیں۔

واضح رہے کہ رواں ماہ کے آغاز میں لاہور ہائیکورٹ نے مذکورہ کیس میں مریم نواز کی ضمانت منظور کی تھی۔

نیب کو شک ہے کہ مریم نواز نے منی لانڈرنگ کے ذریعے سی ایس ایم میں بھاری رقوم کی سرمایہ کاری کی ہے۔

نیب کی جانب سے الزام لگایا گیا ہے کہ جب مریم نواز کے والد وزیراعظم تھے تب انہوں نے غیر ملکیوں کے تعاون سے 93-1992 کے درمیانی عرصے میں منی لانڈرنگ کی۔

دریں اثنا نواز شریف کی استثنیٰ درخواست کے بارے میں جج نے استفسار کیا کہ سابق وزیراعظم آج عدالت میں کیوں پیش نہیں ہوئے؟

جس کے جواب میں ان کے وکیل نے بتایا کہ لاہور ہائیکورٹ کے حکم پر نواز شریف علاج کے لیے بیرون ملک گئے ہیں۔

ایڈووکیٹ امجد پرویز نے کہا کہ مکمل علاج کے بعد نواز شریف پاکستان واپس آجائیں گے اور اپنے خلاف تمام مقدمات کا سامنا کریں گے۔

دونوں استثنیٰ کی درخواستوں کے جواب میں نیب نے کہا کہ وہ تحریری جواب داخل کرے گا۔

جس پر عدالت نے احتساب بیورو کی درخواست مسترد کرتے ہوئے کہا کہ وہ سماعت کے دوران مریم نواز کی درخواست پر اپنے دلائل پیش کریں۔

پراسیکیوٹر نے کہا کہ اگر کسی کو ضمانت مل جاتی ہے تو ان کے لیے مقدمے کی سماعت میں پیش ہونا ضروری تھا۔

نیب کو سی ایس ایم کیس میں تیزی سے ریفرنس پیش کرنے کا حکم دیتے ہوئے عدالت نے کارروائی 6 دسمبر تک ملتوی کردی۔

علاوہ ازیں مریم نواز کے کزن یوسف عباس کے عدالتی ریمانڈ میں بھی اگلی سماعت تک توسیع کردی گئی۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *